کچرے سے ملنے والی کارآمد اشیاء فروخت کر کے ایک سال میں 1 کروڑ 88 لاکھ روپے کمائے۔کچرے سے ملنے والی کارآمد اشیاء فروخت کر کے ایک سال میں 1 کروڑ 88 لاکھ روپے کمائے۔

آسٹریلیا میں ایک پیشہ ور صفائی کرنے والا کچرے میں پائی جانے والی مفید اشیاء فروخت کر کے سالانہ 1 لاکھ آسٹریلین ڈالر (تقریباً 188 لاکھ روپے) کماتا ہے۔ انڈیا ٹائمز کے مطابق لیونارڈو اربانو نامی اس شخص کا تعلق آسٹریلیا کے شہر سڈنی سے ہے جہاں وہ ہر صبح کوڑا اٹھانے کا کام کرتا ہے۔

WhatsApp Group Join Now
Telegram Group Join Now
Instagram Group Join Now


ایک سال قبل اس نے اپنی ملازمت کو منافع بخش کاروبار میں تبدیل کرنے کا فیصلہ کیا اور کوڑے سے مفید اشیاء فروخت کرنا شروع کر دیں۔ لیونارڈو کا کہنا ہے کہ انہیں کوڑے میں بہت سی قیمتی اشیاء بھی ملتی ہیں جن میں فینڈی بیگز، کافی مشینیں، سونے کے زیورات اور نقدی شامل ہیں۔ سی این بی سی سے بات کرتے ہوئے، لیونارڈو نے انکشاف کیا کہ اس نے گزشتہ ایک سال کے دوران کوڑے دان سے ان اشیاء کو تلاش کرکے فروخت کرکے A$100,000 کمائے ہیں۔
لیونارڈو سے ایک ٹی وی چینل نے پوچھا کہ انہیں کوڑے میں سب سے قیمتی چیز کون سی ملی؟ جواب میں لیونارڈو نے بتایا کہ اسے ایک فینڈی بیگ ملا ہے جسے اس نے 200 آسٹریلوی ڈالر (تقریباً 37500 روپے) میں فروخت کیا۔ اسی طرح ردی کی ٹوکری سے ملنے والی قیمتی اشیاء میں سونے کے زیورات بھی شامل ہیں جو سینکڑوں ڈالر میں فروخت ہوئے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *